Woh Panchion Ke Gol Saaray

ROHAAN

Senior Member
Aug 14, 2016
907
602
393
flocking-birds.png


وہ پنچھیوں کے غول سارے

تُجھے کیا خبر میرے ہمسفر
تیرے بعد بستی کے سب شجر
تیرے غم کو مِل کر منا رہے ہیں
یہ اپنے پتے گِرا رہے ہیں
وہ پنچھیوں کے غول سارے
کہ جِن کی چہچہاٹوں میں
محبتیوں کی دُھنیں تھیں بجتیں
وہ سب ہی ایک اُداس سُر میں
تمہارا ماتم منا رہے ہیں
یہ بستی والے جو مانتے تھے
تُجھے محبت کی ایک دیوی
جو تیرے ہونے سے مانتے تھے
کہ آسمانوں کی تہہ کے پیچھے
کوئی تو ہو گا
کہ جس نے تُجھ سا حسین یارم
محبتوں کا سفیر یارم
بنا کے دُنیا پے بھیج ڈالا
یہ تیرے جانے کے بعد ہمدم
خُدا کو یکسر بُھلا رہے ہیں
یہ تیرے سارے ہی بھگت دیوی
مُلحدوں کی صف میں جا کر
خُدا کے ہونے کے سب دلائل
ہوا میں مِل کر اُڑا رہے ہیں
 
  • Like
Reactions: Angela
Top